آئین کو منسوخ کرنے کیلئے استعماری سازشیں جاری ہیں ۔حکمران صرف قرآن و سنت کی تعلیمات کی ہی نہیں کے آئین کی بھی خلاف ورزی کررہے ہیں ۔کے آئین میں واضح طور پر ملک میں اللہ کی حاکمیت کو تسلیم کیا گیا ہے اور عہد کیا گیا ہے کہ ملک میں کوئی قانون قرآن وسنت کے خلاف نہیں بنایا جائے گا ،اس آئین کومنسوخ کرنے کیلئے بین الاقوامی سازشیں جاری ہیں اور خود حکمران آئین و قانون کی سب سے زیادہ خلاف ورزیاں کررہے ہیں ۔امیر جماعت اسلامی سینیٹر سراج الحق

1

لاہور11مارچ2015ء

    امیر جماعت اسلامی پاکستان سراج الحق نے کہا ہے کہ 73کے آئین کو منسوخ کرنے کیلئے استعماری سازشیں جاری ہیں ۔حکمران صرف قرآن و سنت کی تعلیمات کی ہی نہیں 73کے آئین کی بھی خلاف ورزی کررہے ہیں ۔73کے آئین میں واضح طور پر ملک میں اللہ کی حاکمیت کو تسلیم کیا گیا ہے اور عہد کیا گیا ہے کہ ملک میں کوئی قانون قرآن وسنت کے خلاف نہیں بنایا جائے گا ،اس آئین کومنسوخ کرنے کیلئے بین الاقوامی سازشیں جاری ہیں اور خود حکمران آئین و قانون کی سب سے زیادہ خلاف ورزیاں کررہے ہیں ۔اگر ایک بارملک کو متفقہ آئین سے محروم کردیا گیا تو دوبارہ قوم کسی ایک آئین پر متحد نہیں ہوسکے گی ۔ظلم و جبر اور استحصال سے پاک معاشرے کا قیام صرف نظام شریعت ہی سے ممکن ہے ،روٹی کپڑا اور مکان صرف اسلام کا عادلانہ نظام دے سکتا ہے ۔دنیاکو خوشحال بنانے کے دعویدار کمیونزم اور سوشلزم اپنی موت مر چکے ہیں ۔پاکستان کی ترقی و خوشحالی اور فلاح کی ضمانت صرف نظام مصطفےٰ میں ہے ۔جماعت اسلامی کے مرکزی میڈیاسیل منصورہ سے جاری کردہ پریس ریلیز کے مطابق ان خیالات کا اظہار انہوں نے کھاریا ں میں جماعت اسلامی کے سابق ضلعی امیر اور مرکزی شوریٰ کے رکن ڈاکٹر سید احسان اللہ شاہ کی نماز جنازہ کے موقع پر کارکنوں سے خطاب اور میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔
    سراج الحق نے کہا کہ ہماری جدوجہد ملک سے طبقاتی اور استحصالی نظام کے خاتمہ کے لئے ہے اور ہم ہر اس کوشش کا خیر مقدم کرتے ہوئے اس کا ساتھ دیں گے جو عوام کو ظالمانہ نظام سے نجات دلانے کیلئے کی جائے گی۔انہوں نے کہا کہ پاکستان کو اسلامی و فلاحی ریاست بنانا وقت کی ضرورت ہے ،گزشتہ 67سالوں میں عوام کو محرومیوں اور مجبوریوں کے سوا کچھ نہیں دیا گیا ۔قومی وسائل پر اشرافیہ قابض ہے جو غریب کے منہ سے روٹی کا آخری ٹکڑا بھی چھیننا چاہتا ہے ،غریب کو انصاف ملتا ہے نہ اسے تعلیم ،صحت اور روز گار کی سہولتیں دستیاب ہیں جبکہ ان کے ووٹوں سے اقتدار کے مزے لوٹنے والوں نے ہمیشہ ان کی امنگوں کا خون کیا ۔انہوں نے کہا کہ قادیانی و سیکولر لابی 73ءکے آئین کے خاتمہ کیلئے سرگرم ہے تاکہ جس آئین میں انہیں کافر قرار دیا گیا ہے اس سے چھٹکارا حاصل کرلے مگر وہ اس طرح کی سازشوں میں کامیاب نہیں ہوسکے گی ،پاکستان کے اٹھارہ کروڑ عوام قومی آئین کا دفاع کریں گے ۔انہوں نے کہا کہ حکمرانوں کی ذمہ داری ہے کہ وہ عوام کو قرآن و سنت کے مطابق زندگی گزارنے کیلئے سہولتیں فراہم کریں ۔
    سراج الحق نے کہا کہ جماعت اسلامی ملک کی داخلہ ،خارجہ اور معاشی و اقتصادی پالیسیوں کو قرآن و سنت کے تابع کرنا چاہتی ہے ۔ہم چیف جسٹس کے ہاتھ میں انگریز کے قانون کی بجائے اللہ کے قانون کی کتاب دیکھنا چاہتے ہیں تاکہ عام آدمی کو عدل و انصاف مل سکے اور لوگوں کو حصول انصاف کیلئے کئی کئی سال تک عدالتوں کی خاک نہ چھاننا پڑے ۔انہوں نے کہا کہ ہم چاہتے کہ وکلاءبھی عدالتوں میں برطانیہ ،امریکہ اور یورپی قوانین کے حوالے دینے کی بجائے قرآن حکیم کی روشنی میں دلائل دیں ۔انہوں نے کہا کہ جو اللہ پوری کائنات کے نظام کو چلا رہا ہے کیا اس نے انسان کو پیدا کرنے کے بعد زندگی گزارنے کا نظام نہیں دیا؟ ،ہم اسی نظام حیات کو اپنا کر پریشانیوںاور مصیبتوں سے نجات حاصل کرسکتے ہیں۔انہوں نے ڈاکٹر سید احسان اللہ شاہ کی غلبہ اسلام کیلئے جدوجہد کو زبردست الفاظ میں خراج تحسین پیش کرتے ہوئے ان کیلئے مغفرت اور پسماندگان کیلئے صبر جمیل کی دعا کی ۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s