حکومتوں کی ناک کے نیچے ایم کیو ایم کی دہشتگردی جاری رہی 260 مزدوروں کو زندہ جلا دیا گیا لیکن ظالم نظام نے اس کی پرواہ نہ کی ۔سراج الحق کامقامی ہوٹل میں کتاب کی تقریب رونمائی سے خطاب

15-03-15 pic 02

لاہور15مارچ 2015ء
    امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہاہے کہ حکومتوں کی ناک کے نیچے ایم کیو ایم کی دہشتگردی جاری رہی 260 مزدوروں کو زندہ جلا دیا گیا لیکن ظالم نظام نے اس کی پرواہ نہ کی ۔ انہوں نے کہاکہ بھلا ہو رینجرز کا جنہوں نے جرا ¿ت کا مظاہرہ کرتے ہوئے ایم کیو ایم کے مرکز پر چھاپہ مار کر بڑی تعداد میں ناجائز اسلحہ اور دہشتگردوں کو پکڑا ہے ۔ انہوں نے کہاکہ اکیسویں ترمیم میں ایسے دہشتگردوں کو تحفظ فراہم کیا گیاہے ۔ انہوں نے کہاکہ دہشتگرد مجرم ہے خواہ وہ کسی مدرسہ کا پڑھاہواہو یا اس نے کسی کالج یا یونیورسٹی سے ڈگریاں لی ہوں ۔ انہوں نے کہاکہ بلاتفریق دہشتگردوں کے خلاف کاروائی ہونی چاہیے ۔ ان خیالات کااظہار انہوں نے مقامی ہوٹل میں منعقدہ سینئر کالم نگار ڈاکٹر حسین پراچہ کی کتاب ” حکم اذاں “ کی تقریب رونمائی سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ تقریب سے مجیب الرحمن شامی ، اعجاز الحق ، فرخ سہیل گوئندی ، ڈائریکٹر انفارمیشن راﺅ لیاقت علی ، پروفیسر رشید رضوی ، سہیل وڑائچ ، حفیظ اللہ نیازی ، ڈاکٹر فرید احمد پراچہ و دیگر نے بھی خطاب کیا ۔
    سینیٹر سراج الحق نے کہاکہ پاکستان کو آئین اور میرٹ کی حکمرانی کی ضرورت ہے ۔ ملک پر 68 سالوں سے افراد اور پارٹیوں کی حکومت رہی لیکن ملک و ملت مسائل کی دلدل میں دھنستے چلے گئے ۔ جب تک پاکستان پر کرپٹ سرمایہ داروں اور جاگیرداروں کا قبضہ ہے عام آدمی کے مسائل حل نہیں ہوں گے ۔ پاکستان کی منزل لاالہ الا اللہ ہے ۔ پاکستان اسی وقت ترقی و خوشحالی کی طرف بڑھے گا جب اس کو اس کے نظریہ کے مطابق چلایا جائے گا ۔
    سراج الحق نے کہاکہ بانی ¿ پاکستان قائد اعظم محمد علی جناح ؒ نے اپنے ایک سو سے زائد خطابات میں پاکستان کو ایک اسلامی اور فلاحی ریاست قرار دیا تھا اور فرمایاتھاکہ پاکستان کا دستور وہی ہوگا جو اللہ تعالیٰ نے چودہ سو سال پہلے قرآن پاک کی صورت میں عطا فرمایا تھا ۔ انہوں نے کہاکہ پاکستان ظالم جاگیرداروں اور کرپٹ سرمایہ داروں کے لیے نہیں بنا تھاجہاں غریب کو کوئی انصاف نہیں ملتا۔ انہوں نے کہاکہ پاکستان کا عدالتی ، معاشرتی ومعاشی نظام اس وقت اس کے نظریے کے مطابق نہیں ہے ۔ پاکستان ہمارے لیے مسجد کی حیثیت رکھتاہے اگر اللہ تعالیٰ نے ہمیں اختیار دیا تو ہم فرد اور پارٹی کی بجائے ملک میں قانون اور میرٹ کی حکمرانی قائم کریں گے ۔ انہوں نے کہاکہ ہم قوم کو ایسا پاکستان دیناچاہتے ہیں جس میں صدر اور چوکیدار کی حیثیت برابر ہو ۔ انہوں نے کہاکہ ہم ملک میں یکساں نظام تعلیم اور یکساں نصاب رائج کریں گے ۔ اگر قومی زبان اردو کو ملک میں رائج نہ کیا گیا تو یہ آثار قدیمہ بن کر رہ جائے گی ۔ انہوں نے کہاکہ ہم نے تو بار بار حکومت کو توجہ دلائی ہے کہ وہ مختلف مسالک کے بورڈزکی بجائے مدارس کے طلبہ کا امتحانی نظام بھی ایک بورڈ کے تحت کیا جائے۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s