الطاف حسین کی طرف سے کراچی کو الگ صوبہ بنانے اور سندھ ون اور سندھ ٹو کا نعرہ اسٹیبلشمنٹ اور حکومت کی طرف سے نائن زیر پر رینجرز کے چھاپے اور مطلوب مجرموں کوپکڑنے کا ردعمل ہے ۔سراج الحق کا لاہور میں جماعت اسلامی کے ناظمین شعبہ جات کے اجلاس سے خطاب

pic ji meeting12

لاہور28اپریل2015ء
    امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہاہے کہ الطاف حسین کی طرف سے کراچی کو الگ صوبہ بنانے اور سندھ ون اور سندھ ٹو کا نعرہ اسٹیبلشمنٹ اور حکومت کی طرف سے نائن زیر پر رینجرز کے چھاپے اور مطلوب مجرموں کوپکڑنے کا ردعمل ہے ۔ لسانی ، مسلکی اور قومیت کی بنیاد پر پاکستان کی جغرافیائی تقسیم سے نئے فتنے کھڑے ہوں گے ۔ انتظامی بنیادوں پر آئینی طریق کار کے مطابق نئے صوبے بنانے میں کوئی حرج نہیں مگر اس کے لیے ضروری ہے کہ اس پر مکمل قومی اتفاق رائے ہو ۔ بات صرف سندھ کی تقسیم تک محدود نہیں رہے گی بلکہ کئی یونٹ اٹھ کھڑے ہوں گے ۔سرائیکی ، ہزارہ ۱، پشتون بیلٹ سمیت کئی علاقوں کے عوام پہلے سے الگ صوبوں کا مطالبہ کر رہے ہیں ۔ ہم ملک سے سٹیٹس کو کی سیاست کا خاتمہ چاہتے ہیں ۔ ہم عوام کو ان کے بنیادی حقوق دلانے کی جدوجہد کر رہے ہیں عوام بھی اپنے پاﺅں پر کلہاڑی مارنے اور سانپوں کو دودھ پلاکر اژدھے بنانے کے رویہ کو ترک کر کے ایسے لوگوں کا انتخاب کریں جو ان کے حقوق کی جنگ لڑ رہے ہیں۔ان خیالات کااظہار انہوں نے لاہور میں جماعت اسلامی پاکستان کے مرکزی شعبہ جات کے ناظمین سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ اس موقع پر نائب امراءراشد نسیم ، حافظ محمد ادریس اور سیکرٹری جنرل لیاقت بلوچ بھی موجود تھے ۔
    سینیٹر سراج الحق نے کہاکہ ملک میں انتظامی بنیادوں پر نئے صوبے بنانے میں کوئی قباحت نہیں مگر جب تک قومی اتفاق رائے نہ ہو ، اس مسئلے کو اٹھانا ملکی وحدت اور یکجہتی کے لیے خطرناک ہوگا ۔ اگر پاکستان کو لسانی اور مسلکی بنیادوں پر تقسیم کرنے کی بات چل نکلی تو پھر اس کو روکنا مشکل ہو جائے گا۔ اسلام و پاکستان دشمن چاہتے ہیں کہ 1971 ءکی طرح پاکستان میں ایک بار پھر تعصبات کو ہوا دے کر قومی یکجہتی کو پارہ پارہ کر دیا جائے ۔انہوں نے کہاکہ اس موقع پر قومی قیادت کو بیدار مغز ہونے کا ثبوت دیتے ہوئے دشمن کی سازشوں کو ناکام بنانا ہوگا۔
    سینیٹر سراج الحق نے کہاکہ 68 سال تک ملک میں حکمرانی کرنے والوں نے اگر نظریہ پاکستان سے وفاداری کی ہوتی تو آج قوم مختلف گروہوں میں تقسیم نہ ہوتی ۔ ملک کے آئین پر عمل درآمد نہ کرنے کی وجہ سے آج عوام کے اندر ایک مایوسی اور ناامیدی پائی جاتی ہے ۔ ملکی اقتدار پر قابض ٹولے نے تمام اداروں کو یرغمال بنارکھاہے ۔ اسٹیبلشمنٹ ، عدلیہ ، فوج اور اعلیٰ ترین عہدوں پر انہی وڈیروں ، جاگیرداروں اور سرمایہ داروں کے بیٹے بھتیجے اور بھانجے براجمان ہیں ، قوم نے جن لوگوں سے آزادی اور نجات کے لیے ایک تحریک چلائی تھی ،ابھی تک وہی ٹولہ مسلط ہے ۔ انہو ں نے کہاکہ ملک میں ظالم اور مظلوم کی جنگ ہے ۔ ظالم متحد اور مظلوم منتشر ہیں جس کی وجہ سے انہیں مسلسل مظالم کا سامنا ہے ۔جب تک عوام اہل اور دیانتدار قیادت کاانتخاب نہیں کریں گے انہیں تعلیم ، صحت اور روزگار کے غصب شدہ حقوق حاصل نہیں ہوںگے ۔
    سینیٹر سراج الحق نے کہاکہ دہشتگرد ی ملکی پیداوار نہیں اسے درآمد کیا گیا اور اسے کمائی کا ذریعہ بنایا گیاہے ۔ دہشتگردی اور بدامنی مشرف کی ملک دشمن پالیسیوں کا خمیازہ ہے جوقوم کو بھگتنا پڑ رہاہے ۔ انہوں نے کہاکہ حکومت دہشتگردی سے نمٹنے اور اسے ختم کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے دہشتگردی کی مارکیٹ مندے کاشکار ہوکر ختم ہورہی ہے ۔ حکمران بھی اب اس پالیسی کو لپیٹ رہے ہیں ۔ سراج الحق نے کہاکہ ہم چاہتے ہیں کہ وفاقی اور چاروں صوبائی حکومتیں اپنی مدت پوری کریں تاکہ آئندہ انتخابات میں عوام ان کے جھوٹے دعوﺅں اور نعروں کے جھانسے میں نہ آئیں اور انتخابات کے دن کو حکمرانوں کے لیے یوم حساب بنادیں۔
                  

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s