مصر کے معزول صدر محمد مرسی سمیت 100 رہنماﺅں و کارکنوں کو سزائے موت سنانے کی سخت الفاظ میں مذمت کی اور کہا کہ پاکستان کے عوام اس سزا کو مسترد کرتے ہیں۔عالم اسلام سے اپیل کرتا ہوں کہ ان سزاﺅں کے خلاف آواز اٹھائیں۔ مغرب کو اسلامی تحریکوں کی پر امن آئینی سیاسی جدوجہد بھی گوارا نہیں ہے۔مغرب کو دہرا معیار ختم کرنا ہو گا۔ سینیٹر سراج الحق

Sirajul haq P ress

لاہور17 مئی2015ء
    امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے مصر کے معزول صدر محمد مرسی سمیت 100 رہنماﺅں و کارکنوں کو سزائے موت سنانے کی سخت الفاظ میں مذمت کی اور کہا کہ پاکستان کے عوام اس سزا کو مسترد کرتے ہیں۔عالم اسلام سے اپیل کرتا ہوں کہ ان سزاﺅں کے خلاف آواز اٹھائیں۔ مغرب کو اسلامی تحریکوں کی پر امن آئینی سیاسی جدوجہد بھی گوارا نہیں ہے۔مغرب کو دہرا معیار ختم کرنا ہو گا۔ مصر کی عدالت نے فرعون کی یاد تازہ کر دی ہے۔جنرل سیسی کا انجام بھی فرعون کی طرح کا ہو گا۔ سانحہ صفورہ کراچی سمیت تمام خونی سانحات کے حقائق سامنے لانے کے لیے ”ٹروتھ کمیشن“ بنایا جائے۔ خواتین کے سروں پر گولیاں مارنے سے بڑی بزدلی کوئی نہیں ہو سکتی۔ سانحہ کی سچائی سامنے لائیں یا ایک اور سانحہ کا انتظار کریں ۔ایک تنظیم نے کراچی پولیس میں ہزاروں بھرتیاں کروائی ہیں ایسی پولیس عوام کے جان ومال نہیں اپنے سیاسی آقاﺅں کے مفادات کا تحفظ کرتی ہے جماعت اسلامی کو حکومت ملی تو 13 لاکھ آئمہ مساجد ،مدارس کے 31 لاکھ بچوں کا بھی مرکزی و صوبائی بجٹس پر مساوری حق ہو گا۔پٹواری ،پولیس، کلرک ،استاد کو سرکاری خزانہ سے تنخواہ مل سکتی ہے تو مدارس اور آئمہ کرام اس سے کیوں محروم ہیں۔ جماعت اسلامی کے مرکزی میڈیا سیل کے پریس ریلیز کے مطابق ان خیالات کا اظہار انہوں نے اتوار کو اسلام آباد میں جمعیت طلبہ عربیہ کے تحت علماءکنونشن سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔
    سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ پاکستان میں مدارس مسالک کی بجائے اتحاد امت کے پیغام کو عام کر رہے ہیں۔دشمن ان مدارس منبر و محراب کو تقسیم کرنا چاہتا ہے۔ اتحاد امت کی کاوشوں کو مضبوط کرنے کی ضرورت ہے۔امیر جماعت اسلامی پاکستان نے واضح کہا کہ فرقہ واریت قطعاً مسلمانوں کا ایجنڈہ نہیں امت کی تقسیم دشمن کے عزائم ہیں دشمن ہمیں رنگ ونسل،مسالک اور علاقائیت کی بنیاد پر تقسیم کرنا چاہتا ہے تقسیم کے فتنہ کی وجہ سے سقوط ڈھاکہ ہوا مسالک کو بنیاد بنا کر امت کو تقسیم کرنے کی سازشوں کو سمجھنا ہو گا۔ ہمیں ایک قوم ایک امت رہنا ہے ایٹم بم سے زیادہ اہم قوم کو ایک نصاب تعلیم دینا ہے۔تعلیم کے جدید اور قدیم اداروں کی تقسیم نے بچوں کو تقسیم کر دیا۔ قوم نے جماعت اسلامی کو موقع دیا تو پرائمری سے میٹرک تک ایک نصاب دیں گے یکساں ماحول فراہم کریں گے۔ یہ ایسا یکساں نظام تعلیم ہو گا جس سے بہترین ڈاکٹرز،انجینئرز کرپشن سے نفرت کرنے والا باعمل مسلمان تیار ہو گا جو قوم کی تعمیر کرے گا۔مساجد کو تعلیمی نظام کا حصہ بننا چاہیے۔تعلیمی مرکز مسجد ہی کی پیداوار ہے بلکہ پہلی یونیورسٹی مسجد ہی میں قائم ہو ئی تھی۔ مسجد کو عدالتی نظام کی بنیاد ہونا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ وفاقی اور صوبائی حکومتوں کے بجٹ پیش ہوتے ہیں۔مدارس کے 31 لاکھ طلبہ اور آئمہ کرام کو بجٹ سے کیوں محروم رکھا جاتا ہے ۔دفاع کے بعد سب سے زیادہ تعلیم پر خرچ ہونا چاہیے۔بھارت میںتعلیمی شعبے کو جو مراعات حاصل ہیں پاکستان میں کوئی سوچ بھی نہیں سکتا۔ پنجاب حکومت نصاب کے لیے باہر سے ماہر بلا رہی ہے سندھ میں بھی بچوں کے نصاب کے لیے باہر سے ایک خاتون کو بلوایا گیا ہے۔اپنی ماﺅں،بہنوں ،بیٹیوں کی صلاحیت پر اعتماد کیوں نہیں کیا جاتا۔ انہوں نے کہا کہ ملک میں کئی خونی حادثات ہوئے کراچی میں 12 مئی کا واقعہ ہوا 8 اپریل کو وکلاءکو زندہ جلایا گیا258 محنت کشوں کو جلایا گیا۔کس واقعہ کے ملزمان گرفتار ہوئے ؟اب بس پر حملہ کر کے خواتین کے سروں پر گولیاں برسائی گئیں خواتین پر ہاتھ اٹھانا ہمارے معاشرے میں ویسے بھی بزدلی تصور کیا جاتا ہے خواتین کو اس طرح نشانہ بنانا مہذب جمہوری معاشرے میں باعث شرم ہے۔اس حادثے کے قاتلوں کا بھی پتہ نہیں چلے گا اور ہم ایک اور حادثے کا انتظار کر رہے ہیں۔انہوں نے مطالبہ کیا کہ ان خونی سانحات کے لیے ”ٹروتھ کمیشن “بنایا جائے ۔سیاسی اور ریاستی دباﺅ سے بالاتر ہو کر سانحہ صفورا کے حقائق قوم کے سامنے لائے جائیں۔ کورکمانڈر کراچی نے جو حقائق بیان کیے ہیں وہ سیاستدانوں کے لیے لمحہ فکریہ ہیں۔سیاسی ناکامی ،بدانتظامی اور خرابیوں کی نشاندہی کی گئی ہے مجھے خود کراچی کے پولیس آفیسرنے بتایا ہے کہ جب بھی کسی مجرم کا پیچھا کرتے ہیں یا تو وہ کسی عالیشان عمارت میں پناہ لے لیتا ہے یا کسی سیاسی جماعت کے دفتر میں گھس جاتا ہے کراچی پولیس کو غیر سیاسی بنانا ہو گا۔انہوں نے کہاکہ ہم ملک میں انتخابی دھاندلی کی تحقیقات کے لیے عدالتی کمیشن کے فیصلے کے منتظر ہیں ۔ عدالتوں کو سیاست سے بالاتر ہو کر فیصلے دینے چاہئیں۔
              

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s