قومی اثاثوں کو بیچنے والے کل اسلام آباد کو فروخت کرنے سے باز نہیں آئیں گے ۔حکمران آئی ایم ایف کو خوش کرنے کیلئے مزدوروں سے روزگار چھین رہے ہیں ۔غریبوں کے ٹیکسوں پر پلنے والی اشرافیہ ان کے منہ سے نوالہ چھین کر خدا کے غضب کو دعوت دے رہی ہے۔قومی اثاثے ملک دشمنوں کے ہاتھوںمیں نہیں جانے دیں گے ۔پی آئی اے سمیت قومی اداروں کا تحفظ ہر پاکستانی کا فریضہ ہے۔آئی ایم ایف اور ورلڈ بنک کے غلاموں کوقومی سلامتی سے کھیلنے کا موقع نہیں دیا جاناچاہیے ۔سراج الحق

0
امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ قومی اثاثوں کو بیچنے والے کل اسلام آباد کو فروخت کرنے سے باز نہیں آئیں گے ۔حکمران آئی ایم ایف کو خوش کرنے کیلئے مزدوروں سے روزگار چھین رہے ہیں ۔غریبوں کے ٹیکسوں پر پلنے والی اشرافیہ ان کے منہ سے نوالہ چھین کر خدا کے غضب کو دعوت دے رہی ہے۔قومی اثاثے ملک دشمنوں کے ہاتھوںمیں نہیں جانے دیں گے ۔پی آئی اے سمیت قومی اداروں کا تحفظ ہر پاکستانی کا فریضہ ہے۔آئی ایم ایف اور ورلڈ بنک کے غلاموں کوقومی سلامتی سے کھیلنے کا موقع نہیں دیا جاناچاہیے ۔نجکاری کے خلاف سینیٹ اورقومی اسمبلی میں بھی آواز اٹھائیں گے اور عوام کو بھی سڑکوں پر لائیں گے ۔قومی اداروں کی بندر بانٹ کو کسی صورت برداشت نہیں کرکیا جاسکتا ۔ جماعت اسلامی کے مرکزی میڈیا سیل کے مطابق ان خیالات کا اظہار انہوں نے راولپنڈی کے مقامی ہوٹل میں اسلامی جمعیت طلبہ کے زیر اہتمام ٹیلنٹ ایوارڈ کی تقریب سے خطاب اور بعد ازاں میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔اس موقع پر ناظم اسلامی جمعیت طلبہ زبیر صفدر بھی موجود تھے ۔
سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ حکمران نجکاری کی بیماری میں مبتلا ہیں جس کا واحد علاج مزدوروں کے پاس ہے ،مزدور متحد ہوکر اقتدار کے ایوانوں کا گھیراﺅ کرنا چاہیے اور جب تک حکومت قومی اثاثوں کی فروخت کا فیصلہ واپس نہیں لیتی وہ اسلام آباد سے اٹھ کر نہ جائیں ۔ ۔انہوں نے کہا کہ صرف ایک سال کیلئے حکومتی کرپشن ختم ہوجائے تو قومی اداروں کی فروخت کی ضرورت نہیں پڑے گی ۔سالانہ چار ہزار ارب روپے کی کرپشن نے تمام اداروں کو کھوکھلا کردیا ہے مگر حکمران ٹس سے مس نہیں ہوتے اور آئی ایم ایف کے حکم پر ملک و قوم سے ان کے خون پسینہ کی محنت سے بنائے گئے ادارے چھین لینا چاہتے ہیں ۔ملک و قوم آج جن پریشانیوں ،مشکلات اور بدامنی کا شکار ہے اس کے ذمہ دار حکمران ہیں ،ٹیکس غریب دیتا ہے اور عیش حکمران کرتے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ پی آئی اے ،ریلوے ،سٹیل ملز جیسے اداروں میں خسارے کی اصل وجہ نااہل انتظامیہ، کرپشن اور اس کے سرپرست حکمران ہیں ،جنہوں نے قومی اداروں کوذاتی مفادات کی بھینٹ چڑھا دیا ہے اورملکی معیشت کی ریڑھ کی ہڈی کو توڑ کر لاکھوں مزدوروں کو بے روز گارکرنا چاہتے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ قومی اداروں کو منافع بخش بنانے کیلئے کرپشن کمیشن اور اقربا پروری کے ناسور کو ختم کرنا ہوگا۔انہوں نے کہا کہ اگر مزدوروں کو کارخانوں اور کاشتکاروں اور کسانوں کو کھیتوں کی پیداوار میں حصہ دار بنالیا جائے تو صنعت اور زراعت میں انقلاب لایا جاسکتا ہے ۔
سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ جس طرح فوج ملک میں امن کے قیام اور سرحدوں کے دفاع کیلئے جہاد کررہی ہے اسی طرح جمعیت جہالت کے خلاف جہاد کرکے ملک کے مستقبل کو روشن اور تابناک بنا رہی ہے ۔پاکستان کے لیے جینا بہترین زندگی اور اس پر جان قربان کرنا اعلیٰ ترین شہادت ہے۔انہوں نے کہا کہ ملک میں کئی طرح کے نظام تعلیم رائج ہیں جس سے قوم کے اتحاد اور یکجہتی کو سخت نقصان پہنچا ہے اور عوام مختلف گروہوں میں تقسیم ہوچکی ہے ۔انہوں نے کہا کہ اللہ نے ہمیں موقع دیا اور عوام نے ہماراانتخاب کیا تو سب سے پہلے یکساں نظام اور نصاب تعلیم رائج کریں گے ،انہوں نے کہا کہ دولت کے پجاریوں نے معصوم بچوں کو بھی مال اور دولت کی بنیاد پر تقسیم کردیا ہے ،غریب کے بچے کیلئے ٹاٹ ،ٹائیلٹ اور ٹیچر کے بغیر سکول اور امیروں کے شہزادوں کیلئے دودھ ڈبل روٹی اور پنیر دینے والے اعلیٰ ترین تعلیمی ادارے ہیں جہاں شہزادوں کو گھوڑوں کی سواری بھی کروائی جاتی ہے
سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ ہم افغان صدر اشرف غنی کو پاکستان آمد پر خوش آمدید کہتے ہیں،پاکستان اور افغانستان اسلام کے رشتے میں بندھے دو بھائی ہیں جن کی خوشیاں اور غم ایک ہیں ،دونوں کا مستقبل ایک ہے ،دونوں ملکوں کی ترقی و خوشحالی اور امن کا ضامن اسلام ہے ،انہوں نے کہا کہ خطے میں قیام امن کیلئے افغانستان اور پاکستان موثر کردار ادا کرسکتے ہیں ۔حکومت کو چاہئے کہ وہ مختلف تنظیموں کی بجائے افغان عوام کے ساتھ تعلقات کو مضبوط بنائے ۔ 
Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s