چیف جسٹس اور عوام بری حکمرانی پر پریشان ہیں، حکمرانوںنے سب اچھا کی رٹ لگا رکھی ہے سینیٹر سراج الحق کی جماعت اسلامی کی سیاسی کمیٹی کے اجلاس میں گفتگو

pic sirajul haq-

لاہور14دسمبر 2015
امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ چیف جسٹس اور عوام بری حکمرانی پر پریشان ہیں۔ آئی ایس پی آربھی حکمرانوں کو توجہ دلاچکا ہے مگراس کے باوجود حکمرانوںنے سب اچھا کی رٹ لگا رکھی ہے ۔انتظامی طور پر حکومت بری طرح ناکام ہوچکی ہے ۔نیب کے خلاف پیپلز پارٹی کی شکایت دور کرنے کیلئے ضروری ہے کہ نیب کو وفاقی اور صوبائی حکومتوں کے خلاف بھی آزادانہ کاروائی کا موقع دیا جائے اور صفائی کا عمل اسلام آباد سے شروع کیا جائے۔ اسٹیٹس کو کے غلام تبدیلی کی بات سن کر سیخ پاہوجاتے ہیں ،علامہ اقبال ؒاورقائداعظم ؒ کے پاکستان کو دریابرد کردیا گیا ہے ۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے جماعت اسلامی کی سیاسی کمیٹی کے اجلاس اور منصورہ میں جاری پانچ روزہ تربیت گاہ کے شرکاءسے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔
سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ گزشتہ چالیس سال سے اقتدار پر مسلط پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ نے ایک بار پھر 90کی دہائی کی سیاست شروع کردی ہے اور عوام کو دھوکہ دینے کیلئے ایک دوسرے پر الزامات کے تابڑ توڑ حملے کئے جارہے ہیں مگر عوام جان چکے ہیں کہ یہ مصنوعی لڑائی اور عوام کو فریب دینے کا دونوں جماعتوں کا آزمودہ نسخہ ہے۔انہوں نے کہا کہ دونوں جماعتیں ایک دوسرے کا احتساب نہیں چاہتیں بلکہ ایک دوسرے کی کرپشن کو تحفظ دیتی ہیں لیکن جب کوئی ادارہ ان کے گلے میں رسی ڈالنے کی کوشش کرتا ہے تو الزامات کو سیاسی انتقام کا نام دیدیا جاتا ہے اور عوام کی آنکھوں میں دھول جھونکنے کیلئے واویلہ شروع کردیتے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ چور چور کے ہاتھ نہیں کاٹ سکتا ،یہ کام وہی لوگ کرسکتے ہیں جن کا اپنا دامن ہر طرح کی کرپشن سے پاک ہو ۔انہوں نے کہا کہ دونوں جماعتوں کے سینکڑوں لوگوں پر کرپشن کے مختلف الزامات ہیں مگر وہی لوگ بار بار اسمبلیوں اور سینیٹ میں پہنچ جاتے ہیں۔
سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ آئی ایم ایف اور ورلڈ بنک کے قرضوں کی ادائیگی قومی خزانے سے نہیںحکومتوں میں رہنے والوں کے بیرونی بنکوں میں موجود اکاﺅنٹس سے کی جائے گی ۔انہوں نے کہا کہ پاکستان سے سینکڑوں ارب ڈالر کا سرمایہ بیرون ملک منتقل کیا گیا ہے۔حکمران اپنی دولت بیرونی بنکوں سے قومی بنکوں میں لانے پر تیار نہیں ہیں جو اس بات کا ثبوت ہے کہ انہیں اقتدار سے علیحدگی پر پکڑے جانے کا خوف ہے ، انہیں ملک کی اقتصادی صورت حال کو بہتر بنانے سے کوئی غرض نہیں ۔انہوں نے کہا کہ عوام تعلیم ،صحت ،روز گار اور چھت جیسی بنیادی ضروریات کی عدم دستیابی سے سخت پریشان ہیں ،بجلی اور گیس کی بدترین لوڈ شیڈنگ نے لوگوں کی زندگی اجیر ن کردی ہے ۔دنیابھر میں تیل کی قیمتیں اپنی انتہائی نچلی سطح پر آگئی ہیں مگر پاکستان میں نہ صرف قیمتوں میں کوئی کمی نہیں کی گئی بلکہ عوام پر 40ارب ڈالر کا ٹیکسوں کا کوہ ہمالیہ لاد دیا گیا ہے ۔انہوں نے کہا کہ بڑے چوروں نے چوری کو عام کیا ہے جس سے دس بیس کروڑ کے فراڈ کو معمولی قرار دیکر نظر انداز کردیا جاتا ہے جبکہ عام آدمی کو پہلے تو قرضہ ملتا نہیں اور اگر کوئی دوچار لاکھ روپے کا قرضہ حاصل کرنے میں کامیاب ہوجاتا ہے تو بنک اس کا جینا حرام کردیتے ہیں اور کئی گنا سود دینے کے باوجود اس کی گلو خلاصی نہیں ہوتی ۔سراج الحق نے کہا کہ کہ یہ استحصالی اور طبقاتی نظام ہے جس کا عام آدمی گزشتہ 68سال سے اسیر ہے، جب تک ہر شعبہ زندگی میں یکساں نظام رائج نہیں ہوتا یہ ظلم و جبر ختم نہیں ہوگا ۔انہوں نے کہا کہ حکمرانوں کا قبلہ و کعبہ مکہ مکرمہ نہیں، واشنگٹن اور لند ن ہے ،آئی ایم ایف اور ورلڈ بنک سے جو احکامات ملتے ہیں حکمران آنکھیں بند کرکے ان پر عمل درآمد کرتے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ عوام کرپٹ اور بدیانت حکمرانوں سے نجات کیلئے جماعت اسلامی کی دیانتدار قیادت کا ساتھ دیں ۔جب تک بڑے مگر مچھوں کا بے رحم اور کڑااحتساب نہیں ہوتا ملک کی حالت نہیں سدھرے گی ۔  
Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s