اقتدار کے ایوانوںمیں بیٹھے کرپٹ افراد کے خلا ف شدید احتساب کی ضرورت ہے ۔غریب قوم کے 375بلین ڈالر لوٹ کر بیرونی بنکوں میں جمع کروانے والے عوام کی خوشیوں کے قاتل ہیں ۔ملک میں بھوک اور خوف نے مستقل ڈیرے ڈال رکھے ہیں ۔دہشت گردی کے خلاف آپر یشن کو ایک سال ہوگیا مگر اب مزید دس سال تک اس آپریشن کو جاری رکھنے کی ضرورت کا اظہار کیا جارہا ہے ۔سینیٹر سراج الحق کا ڈیرہ مراد جمالی میں شمولیتی اجتماع سے خطاب سبی میں میڈیا سے گفتگو

pic ameer ji (5)
امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ اقتدار کے ایوانوںمیں بیٹھے کرپٹ افراد کے خلا ف شدید احتساب کی ضرورت ہے ۔غریب قوم کے 375بلین ڈالر لوٹ کر بیرونی بنکوں میں جمع کروانے والے عوام کی خوشیوں کے قاتل ہیں ۔ملک میں بھوک اور خوف نے مستقل ڈیرے ڈال رکھے ہیں ۔دہشت گردی کے خلاف آپر یشن کو ایک سال ہوگیا مگر اب مزید دس سال تک اس آپریشن کو جاری رکھنے کی ضرورت کا اظہار کیا جارہا ہے ۔دہشت گردی کا ایک ہی علاج ہے کہ سیاسی معاشی اخلاقی اور انتخابی دہشت گردی کے سوتے بند کئے جائیں ۔سکولوں کی دیواریں اونچی کرکے کانٹے دار تاریں لگانے اور استاد کے ہاتھ میں کلاشنکوف پکڑاکر معصوم بچوں کو خوف زدہ کرنے سے دہشتگردی ختم نہیں ہوگی ۔بلوچستان میں 100ڈیم بنائے جاسکتے ہیں مگر کوئی حکومت اس طرف توجہ دینے کو تیار نہیں جس کا خمیازہ عوام کو اندھیروں اور توانائی کے بحران کی صورت میں بھگتنا پڑتا ہے ۔مرکزی اور صوبائی حکومتیں بلوچستان کے نوجوانوں کو روز گار دینے کیلئے ہنگامی اقدامات کرےں۔بلوچستان کا مسئلہ طاقت سے نہیں مذاکرات سے حل ہوگا اور حکومت کو جلد ازجلد مذاکرات کی میز بچھانا چاہئے ۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے ڈیر ہ مراد جمالی میں شمولیت تقریب سے خطاب اور سبی میں میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔اس موقع پر صوبائی امیر مولانا عبد الحق ہاشمی بھی موجود تھے ۔قبل ازیں ڈیرہ مراد جمالی کی معروف سیاسی و سماجی شخصیات یا ر محمد سوسالی ،محمد عظیم گورشانی ،رئیس عبدلستار سہتو،میر خان ثرخانی ،محمد یعقوب قلندرانی ،خیربخش مینگل ،مختار قاسم ،ڈاکٹر منٹھار ،ڈاکٹر عبد الطیف اور محمد رمضان مینگل سمیت سینکڑوں لوگوں نے اپنے خاندانوں اور قبیلوں سمیت جماعت اسلامی میں شمولیت کا اعلان کیا ۔امیر جماعت اسلامی سینیٹر سراج الحق نے جماعت میں شامل ہونے والوں کا استقبال کیا اور انہیں مبارک باد دی۔
سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ بلوچستان کو مسائل کی دلدل میں دھکیلنے کے ذمہ دار وہ وڈیرے ،نواب اور سردار ہیں جنہیں مرکزی حکومت کی طرف سے کھربوں روپے فنڈ ملا مگر اسے عوام پر خرچ نہیں کیا گیا ،عوام کو آج بھی پینے کا صاف پانی دستیاب نہیں اور ہماری مائیں بہنیں میلوں دور سے گھڑوں میں پانی بھر کر لانے پر مجبور ہیں ،بلوچستان کے نواجوانوں کو تعلیم ،صحت اور روز گار کی سہولتوں سے محروم رکھا گیا جس کی وجہ سے ان کے دلوں میں نفرت پیدا ہوئی ۔ڈیرہ مراد جمالی سے چند کلومیٹر کے فاصلے پر 990میگا واٹ کا پراجیکٹ چل رہا ہے مگر یہاں کی بستیاں اندھیروں میں ڈوبی ہوئی کسی ویرانے کا منظر پیش کررہی ہیں انہوں نے کہا کہ ملک کی اس صورتحال کے مجرم وہ لوگ ہیں جو بار بار حکومت میں رہنے کے باوجود عوام کو درپیش مسائل سے لاتعلق رہے ۔انہوں نے کہا کہ بھٹو خاندان اور میاں برادران سمیت ملک پر 40سال سے حکومت کرنے والوں نے عوام کی قسمت سنوارنے کے بلند و بانگ دعوے کئے مگر ان میں سے ایک بھی وعدہ پورا نہیں ہوسکا ۔بلوچستان کے مسائل بلوچ وزیر اعظم ،سندھ کے مسائل کو سندھی وزیر اعظم اور پختونوں کے مسائل کو پختون وزیر اعظم اور پنجاب کے مسائل کو پنجابی وزیر اعظم حل نہیں کرسکے ۔ملک پر آج بھی وہی اشرافیہ قابض ہے جن کے بڑے انگریزوں کی پارلیمنٹ میں ان کے وزیر مشیر تھے ۔فوجی حکومت ہو یا نام نہاد جمہوری دور انہی کے وارے نیارے ہوتے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ ملک کے وسائل لوٹ کر بیرونی بنکوں میں جمع کروانے والوں نے ملک و قوم کو بدترین تباہی سے دوچار کیا ہے ۔اب وقت آگیا ہے کہ عوام اس ظلم و جبر کے نظام کے خلاف اٹھ کھڑے ہوں جس کی وجہ سے آج ماں اپنے بچوں سمیت خود کشی کرنے اور اعلیٰ تعلیم یافتہ نوجوان ڈگریوں کو جلا کر اپنے گردے فروخت کرنے پر مجبور ہیں ۔انہوں سے اس امر پر افسوس کا اظہار کیا کہ بلوچستان کے لوگوں کو معمولی بیماریوں کا علاج کرانے کیلئے کراچی جانا پڑتا ہے ۔
سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ جماعت اسلامی 69سال سے ملک پر مسلط لوٹ کھسوٹ اور کرپشن کے نظام کو بدلنے کیلئے میدان میں آئی ہے ۔ملک میں مالی ،اخلاقی اور انتخابی کرپشن کی جڑیں کاٹنے کیلئے عوام اٹھ کھڑے ہوں۔انہوں نے کہا کہ کرپشن اور پاکستان اکٹھے نہیں چل سکتے ،مجبور اور محروم عوام ملک سے کرپشن کے خاتمہ اور نظام مصطفے ٰﷺ کے نفاذ کیلئے جماعت اسلامی کی اس تحریک میںجوق در جوق شریک ہوں تاکہ اقتدار کے ایوانوں سے بدیانت اور کرپٹ مافیا کو نکال باہر کیا جائے ۔
سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ میری دشمنی کسی فرد سے نہیں بلکہ عوام پر مسلط کی گئی جہالت ،مہنگائی ،کرپشن ،اسٹیٹس کواور طبقاتی و استحصالی نظام سے ہے ۔میں ملک کو تعصب ،جہالت اور بے روز گاری اور لوڈشیڈنگ کے اندھیروں سے نجات دلانا چاہتاہوں جس کیلئے عوام کو میرے قدم سے قدم اور کندھے سے کندھا ملا کر چلنا ہوگا۔
Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s